Jal Chukay Khaimay Yatimon Kay

Apr 27, 2024

جل چکے خیمے یتیموں کے اندھیرا رہ گیا

 

رات روتی رہ گئ روتا سویرا رہ گیا

جل چکے خیمے یتیموں کے اندھیرا رہ گیا

 

جو باراتی بچ گئے وہ قید ہو کے چل دئیے

سارے دشتِ نینواں میں ایک دلہا رہ گیا

 

یادگاریں رہ گئیں دو مادرِ اصغر کے پاس

ایک کُرتا خوں بھرا اور ایک جھولا ررہ گیا

 

امِّ لیلیٰ رو کے بولی شاہِ دیں جلدی چلو

نوک پے برچھی کی اکبر کا کلیجہ رہ گیا

 

سہراِ اکبر کی لڑیاں خون میں تر ہو گئیں

ہائے صغرا کا ہر اِک ارماں ادھورا رہ گیا

 

سب ہی لاشوں کو اُٹھا کر چل دئیے کوفے کے لوگ

تپتی ریتی پر محمد کا نواسہ رہ گیا

 

پھول زہرا کے چمن سے سب ہی توڑے جا چُکے

جلتے خیموں میں بس اِک بیمار تنہا رہ گیا

 

سَر کھلے زینب چلیں خیموں سے یہ کہہ کر رضا ؔ

خنجروں کی بھیڑ میں بھائ اکیلا رہ گیا

Jal chuky khaimay yatimon kay andhera reh gaya

 

Raat roti reh gayi rota sawera reh gaya

Jal chuky khaimay yatimon kay andhera reh gaya

 

Jo baraati bach gaye wo qaid ho kay chal diye

Saaray dasht e nainawan mein aik dulha reh gaya

 

Yaadgaren reh gayeen do madar e Asghar kay paas

Aik kurta khoon bhara aur aik jhoola reh gaya

 

Umm e laila ro kay boli Shah e deen jaldi chalo

Nok pe barchhi ki Akbar ka kaleja reh gaya

 

Sehra e Akbar ki laryan khoon mein tar ho gayeen

Haye sughra ka har ik arman adhoora reh gaya

 

Sab hi lashon ko utha kar chal diye kofay kay loug

Tapti reti par Mohammad ka nawasa reh gaya

 

Phool Zahra kay chaman se sab hi toray ja chukay

Jaltay khaimon mein bas ik bemaar tanha reh gaya

 

Sar khulay Zainab chaleen khaimon se yeh keh kar raza

Khanjaron ki bheer me bhai akela reh gaya

Share