Mazloom ka matam hai ruka hai na rukega 

Apr 27, 2024

مظلوم کا ماتم ہے رکا ہے نہ رکے گا 

یہ ایسا دیا ہے جو ہواؤں میں جلے گا 

 

رخسار یزیدی پہ لگے گا وہ تمانچہ

جو ہاتھ عزادار کے سینے پہ پڑے گا 

 

شہ بولے یہ ہاتھوں پہ اٹھا کر سر مقتل 

ہے کون جو اصغر سے میرے بات کرے گا 

 

یا حسین یا حسین یا حسین 

صدا رہے گا حسین کا غم 

یہ شور گریا یہ شور ماتم 

زہرا کی دعا ہے یہ ماتم 

یہ ماتم کیسے رک جائے 

 

سہ روز کے پیاسوں سے یہ پانی کا ہے وعدہ 

کونین میں اب کوئی بھی پیاسا نہ رہے گا 

 

حر بن کے کوئی آئے تو شبیر کی جانب 

یہ ایسا گھرانہ ہے جو مانگو گے ملے گا 

 

اکبر نے کہا شہ سے الٹ دوں گا میں لشکر 

بابا مجھے دو گھونٹ اگر پانی ملے گا 

 

یا حسین یا حسین یا حسین 

بادشاہ کربلا دین کا ہے آسرا

تیری مجلس تیرا ماتم زندگی ہے یا حسین 

 

قائم کو ذرا آنے دو غیبت سے تکلم 

ایک حلقہ ابھی خانہ کعبہ میں لگے گا

Mazloom ka matam hai ruka hai na rukega 

Ye aisa diya hai jo hawaon main jalega

 

Rukhsar yazidi pe lagega wo tamacha

Jo haath azadar ke seenay pe parega

 

Sheh bole ye hathon pe utha kar sar e maqtal

Hai kon jo Asghar se mere baat karega

 

Ya Hussain ya Hussain ya Hussain

Sada rahega Hussain ka gham

Ye shor e girya ye shor e matam

Zehra ki dua hai ye matam

Ye matam kase ruk jaye 

 

Seh roz kay pyason se ye pani ka hai wada

Kaunain main ab koi bhi pyasa na rehega

 

Hurr bann kay koi aaye to Shabbir ki janib

Ye aisa gharana hai jo mangogy milega

 

Akbar ne kaha Sheh se ulat dunga main lashkar

Baba mujhe do ghount agar pani milayga

 

Ya Hussain ya Hussain ya Hussain

Badshah e Karbala deen ka hai aasra

Teri majlis tera matam zindagi hai ya Hussain

 

Qaim ko zara anay do ghaibat se takallum

Ik halqa abhi khana e Kaaba main lagega

Share