Sattar Qadam Se Pyasi Behen Dekhti Rahi

Apr 27, 2024

ہائے حسین ہائے حسین 

 

پیاسے گلے پہ بھائی کے چلتی رہی چھری

ستّر قدم سے پیاسی بہن دیکھتی رہی

 

کہتی تھی کیا اسی لئے پیسی تھیں چکیاں

چادر سے صاف کرتی تھی زخموں کو رو کے ماں

زخمی سرِ حسین تھا زہرا کی گود تھی

 

روکے ہوئے تھے پیار میں خنجر کی دھار کو

بیٹے سے کتنا پیار تھا دلدل سوار کو

رکھے ہوئے تھے شہہ کے گلے پر گلا علی

 

خنجر سے شہہ کی زلفیں ہٹانے لگا لعیں

داڑھی کی سمت ہاتھ بڑھانے لگا لعیں

آنکھوں پہ ہاتھ رکھے ہوئے تھا ہر اک نبی

 

مقتل میں چار سال کی زہرا کو گود میں

اک بار پھر اٹھا لے سکینہ کو گود میں

افسوس قاتلوں سے اجازت نہیں ملی

 

چہرہ وطن کی سمت وہ کرتا تھا بار بار

آنکھوں میں تھا بھرا ہوا صغرا کا انتظار

ہائے غریبِ زہرا کی آنکھیں کھلی رہیں

 

کہتا تھا وہ اشاروں میں زینب سے جاؤ گھر

آنکھوں کو بند کرلو کہ کٹ جائے میرا سر

سینے پہ شہہ کے زانو ں تھا رکھے ہوئے شقی

 

لاشہ فرات پر کبھی اٹھا کبھی گرا

کرب و بلا میں حشر تکلم بپا ہوا

عباس تم کہاں ہو صدا جب یہ شہہ نے دی

Haye Hussain Haye Hussain

 

Piyasay galay pe bhai kay chalti rahi churi

Sattar qadam se piyasi behen dekhti rahi

 

Hayee kehti thi kya isliye pisi the chakkiyaan

Chadar sa saaf karti thi zakhmon ko ro kay maa

Zakhmi sar e Hussain tha Zahra ki goud thi

 

Rokay hue thay pyar me khanjar kay waar ko

Betay say kitna pyar tha duldul sawar ko

Rakhay hue thay Sheh kay galay par gala Ali

 

Khanjar se Sheh ki zulfen hatanay laga laeen

Daarhi ki simt haath barhanay laga laeen

Ankhon pe haath rakhay hue tha har ik nabi

 

Haye maqtal me chaar saal ki Zahra ko goud me

Aik bar phir utha le Sakina ko goud me

Afsoos qatilon say ijazat nahi mili

 

Chehra watan ki simt wo karta tha bar bar

Ankhon me tha bhara hua Sughra ka intizar

Haye gareeb e Zahra ki ankhen khuli raheen 

 

Kehta tha wo isharon me Zainab se jao ghar

Ankhon ko band kar lo kay katt jaye mera sar

Seenay pe Sheh kay zanu tha rakhay hue shaqi

 

Haye lasha furat pe kabhi uthta kabhi gira

Karb o bala me hashr takallum bapa hua

Abbas tum kahan ho sada jab ye Sheh ne di

Share