Veeran Gharon Me Qaid Se Yun Wapsi Hui

Apr 29, 2024

شام سے لوٹ کے آئے ہیں مدینے والے

 

ویراں گھروں میں قید سے یوں واپسی ہوئی 

کوئی دیا جلا نہ کہیں روشنی ہوئی 

 

یہ حال ہے کہ بیٹیاں پہچانتی نہیں 

زینب خود اپنے گھر میں بھی اب اجنبی ہوئی 

 

زینب کے بازوؤں پہ یہ نیلے نشان ہیں 

یا پھر رسن ہے ہاتھوں میں اب تک بسی ہوئی 

 

اکبر شہید ہو گئے لیکن وہ انتظار 

صغری ہے ایک وعدے سے اب تک بندھی ہوئی 

 

محمل تو جا کے لوٹ بھی آئے ہیں شام سے 

ایک ماں کی زندگی ہے وہیں پر رکی ہوئی 

 

نیزے سے جو اتاری تھی شمر لعین نے 

زینب کے خون سے ہے وہ چادر بھری ہوئی 

 

ننھی سی بالیوں پہ لہو سے لکھی ہے وہ 

جو بات تھی سکینہ کے رخ پر لکھی ہوئی 

 

اکبر سروں پہ کرب و بلا کی جو خاک تھی 

اس پر ہے قید خانے کی مٹی جمی ہوئی

Sham se laut kay aaye hain Madine walay

 

Veraan gharon mein qaid se youn wapisi hui

Koi diya jala na kaheen roshni hui

 

Ye haal hai kay betiyaan pehchanti nahi

Zainab khud apne ghar mein bhi ab ajnabi hui

 

Zainab ke bazuon pe ye neelay nishan hain

Ya phir rasan hai hathon mein ab tak basi hui

 

Akbar shaheed ho gaye lekin woh intezar

Sughra hai aik waday se ab tak bandhi hui

 

Mehmal tou ja kay laut bhi aaye hain sham se

Ik maa ki zindagi hai waheen par ruki hui

 

Naizay se jo utaari thi shimr e laeen ne

Zainab kay khoon se hai woh chadar bhari hui

 

Nanhi si baliyon pe lahu se likhi hai woh

Jo baat thi Sakina kay rukh par likhi hui

 

Akbar saron pe karb o bala ki jo khaak thi

Us par hai qaid khanay ki matti jami hui

Share